چُوم کر خاکِ درِ یار قدم دھرتا ہوں - علی زریون

چُوم کر خاکِ درِ یار قدم دھرتا ہوں- علی زریون



 چُوم کر خاکِ درِ یار قدم دھرتا ہوں


 چُوم کر خاکِ درِ یار قدم دھرتا ہوں

جست بھر لوں تو اَبَد پار قدم دھرتا ہوں


اک غزالِ سُخن آثار و غزل شیفتہ ہوں

ماورائے رم و رفتار قدم دھرتا ہوں


مردِ جانباز کے ہوتے ہوئے مقتل ویران؟؟

آ مِرے یار کی تلوار ! قدم دھرتا ہوں


نقشِ پا چومتے ہیں تُرک و سمرقند نژاد

جب کبھی بر سرِادوار قدم دھرتا ہوں ! 


جس جگہ سر نہیں رکھنے کی اجازت اِن کو 

میں وہاں پر بھی دگر بار قدم دھرتا ہوں


گاہے گفتار ، گہے نعرہ و للکار کے ساتھ ! 

بر سرِ سینہ ء اغیار قدم دھرتا ہوں 


بر زمینِ دلِ ہر  سرکش و دلکش بَدَنے !

صرف میں ہوں جو لگاتار قدم دھرتا ہوں


راہ خود منہ سے نہ کہہ دے کہ میں ہموار ہوئی 

پھر یہ کہنا کہ میں بے کار قدم دھرتا ہوں


خوش نصیبی! کہ در ایں راہِ جنوں ہم نَفَسَاں

ہمرہِ سرمد و عطار قدم دھرتا ہوں 


خاندانِ بنو ہاشم کی طرف سے اس بار 

تم نہیں ! میں صفِ انصار قدم دھرتا ہوں 


دشت کے خار و سب آزار مجھے جانتے ہیں 

میں یہاں دن میں کئی بار قدم دھرتا ہوں


یہ جو مجھ نقش کا شہرہ ہے ہر اک سمت علی !

میں بصد خوبی و معیار قدم دھرتا ہوں


علی زریون

Post a Comment

0 Comments